پاک بھارت کشیدگی کے باوجود پاک بھارت تجارت میں کتنا بڑا اضافہ ہوا؟ نا قابلِ یقین انکشاف

کراچی(نیوز ڈیسک) پاک بھارت تجارت دوبارہ بڑھنا شروع ہو گئی ، کنٹرول لائن پر کشیدگی کے باعث گزشتہ چند ماہ سے تجارت میں بھی کمی دیکھی جا رہی تھی، لیکن فروری میں دو طرفہ تجارت کم ہونے کی بجائے 17 فیصد بڑھ گئی۔رپورٹ کے مطابق فروری کے دوران پاکستان اور بھارت کی باہمی تجارت 22 کروڑ 64 29 ہزار ڈالر تک پہنچ گئی ، گزشتہ سال
فروری کی باہمی تجارت کا حجم 19 کروڑ 39 لاکھ دالر، اور اس سال جنوری کا 20 کروڑ 86 لاکھ ڈالر تھا۔اسٹیٹ بینک کے مطابق اس سال فروری کے دوران بھارت سے درآمدات 16 فیصد اضافے سے 19 کروڑ 61 لاکھ 61 ہزار ڈالر اور برآمدات 21 فیصد اضافے سے 3 کروڑ 3 لاکھ ڈالر رہیں، دونوں ملکوں کی باہمی تجارت میں کمی کا سلسلہ کنٹرول لائن پر فائرنگ کے واقعات بڑھنے کے بعد ستمبر سے شروع ہوا تھا اور دسمبر تک دو طرفہ تجارت میں 57فیصد تک کمی ریکارڈ کی گئی جنوری میں بھی دو طرفہ تجارت پہلے سے 23 فیصد کم ہوئی تھی۔ رپورٹ کے مطابق رواں مالی سال کے پہلے آٹھ ماہ کے دوران مجموعی طور پر پاک بھارت باہمی تجارت کا حجم 1 ارب 24 کروڑ 41 لاکھ ڈالر رہا ، جو گزشتہ مالی سال اس عرصے کی تجارت سے ابھی 17 فیصد کم ہے۔ پاک بھارت تجارت دوبارہ بڑھنا شروع ہو گئی ، کنٹرول لائن پر کشیدگی کے باعث گزشتہ چند ماہ سے تجارت میں بھی کمی دیکھی جا رہی تھی، لیکن فروری میں دو طرفہ تجارت کم ہونے کی بجائے 17 فیصد بڑھ گئی۔رپورٹ کے مطابق فروری کے دوران پاکستان اور بھارت کی باہمی تجارت 22 کروڑ 64 29 ہزار ڈالر تک پہنچ گئی ، گزشتہ سال فروری کی باہمی تجارت کا حجم 19 کروڑ 39 لاکھ دالر، اور اس سال جنوری کا 20 کروڑ 86 لاکھ ڈالر تھا۔اسٹیٹ بینک کے مطابق اس سال فروری کے دوران بھارت سے درآمدات 16 فیصد اضافے سے 19 کروڑ 61 لاکھ 61 ہزار ڈالر اور برآمدات 21 فیصد اضافے سے 3 کروڑ 3 لاکھ ڈالر رہیں، دونوں ملکوں کی باہمی تجارت میں کمی کا سلسلہ کنٹرول لائن پر فائرنگ کے واقعات بڑھنے کے بعد ستمبر سے شروع ہوا تھا اور دسمبر تک دو طرفہ تجارت میں 57فیصد تک کمی ریکارڈ کی گئی جنوری میں بھی دو طرفہ تجارت پہلے سے 23 فیصد کم ہوئی تھی۔ رپورٹ کے مطابق رواں مالی سال کے پہلے آٹھ ماہ کے دوران مجموعی طور پر پاک بھارت باہمی تجارت کا حجم 1 ارب 24 کروڑ 41 لاکھ ڈالر رہا ، جو گزشتہ مالی سال اس عرصے کی تجارت سے ابھی 17 فیصد کم ہے۔