’میں 30 سال سے فحش فلمیں دیکھنے کی لت میں مبتلا تھا، بالآخر چھوڑنے کا فیصلہ کیا اور یہ کام کرتے ہی سب سے بڑی تبدیلی یہ آئی کہ میں اب۔۔۔‘ آدمی نے ایسی بات کہہ دی کہ جان کر آپ بھی توبہ پر مجبور ہوجائیں

لندن (نیوز ڈیسک) آج کل کے نوجوانوں میں مردانہ کمزوری اور ازدواجی مایوسی جیسے مسائل عام ہو چکے ہیں اور ماہرین کی ایک بڑی تعداد کا کہنا ہے کہ فحش فلمیں اس کی اہم وجہ ہیں۔ متعدد تحقیقات سے ثابت ہوچکا ہے کہ انٹرنیٹ پر کی جانے والی کل سرچز میں سے تقریباً 25 فیصد فحش مواد کے متعلق ہوتی ہیں اور یہ لت انسانی دماغ کو منشیات کی طرح ہی متاثر کررہی ہے۔
دی انڈیپینڈنٹ کی رپورٹ کے مطابق سوشل میڈیا ویب سائٹ ریڈٹ پر ’پورن فری‘ کے نام سے ایک کمیونٹی موجود ہے جو ایسے مردوں پر مشتمل ہے جو اس موذی لت سے چھٹکارا پاچکے ہیں۔ یہ افراد اپنی زندگی میں آنے والی مثبت تبدیلی سے دوسروں کو آگاہ کرکے ان کی مدد کرنا چاہتے ہیں۔ اس کمیونٹی کے ایک رکن ڈیو کا کہنا ہے کہ وہ 30 سال تک باقاعدگی سے فحش فلمیں دیکھنے کی عادت میں مبتلاءرہے لیکن اب انہیں اس موذی لت سے نجات پائے دو سال کا عرصہ گزرچکا ہے۔ وہ کہتے ہیں کہ اب ان کا مقصد اس لت میں مبتلا افراد کو بتانا ہے کہ اس سے نجات پا کر زندگی کس طرح بدل جاتی ہے