’اگر یہ گندے کام کرنے ہیں تو واٹس ایپ بند ہے‘ بڑے اسلامی ملک نے شہریوں کو آخری وارننگ دے دی

جکارتہ(نیوز ڈیسک)دنیا بھر میںا ستعمال ہونے والی مقبول ترین میسجنگ ایپلیکیشن ’واٹس ایپ‘ سے انڈونیشیا کے صارفین اب کسی بھی وقت محروم ہوسکتے ہیں کیونکہ حکومت نے واٹس ایپ کی مالک کمپنی فیس بک کو خبردار کر دیا ہے کہ اس ایپ پر استعمال ہونے والے کچھ فحش GIF ختم نا کئے تو انڈونیشیا میں اس کے استعمال کی اجازت نہیں ہوگی۔ویب سائٹ ’سٹریٹس ٹائمز‘ کے مطابق واٹس ایپ پر تھرڈ پارٹی GIF بڑی تعداد میں دستیاب ہیں جن میں سے کچھ انڈونیشیائی حکومت کی نظر میں انتہائی قابل اعتراض ہیں۔ واٹس ایپ نے انڈونیشیا کی حکومت کو جواب دیا ہے کہ اسے تھرڈ پارٹی کمپنیوں کے ساتھ بات کرنی چاہیے جو اپنی ٹیکنالوجی واٹس ایپ کے ساتھ استعمال کرنے کی سہولت فراہم کرتی ہیں کیونکہ انہی کمپنیوں

کے GIF پر حکومت کو اعتراض ہے۔ انڈونیشیا کی وزارت اطلاعات و معلومات کے ڈائریکٹر جنرل سیموئل پانگرا پان کا کہنا تھا کہ اگر واٹس ایپ سے قابل اعتراض GIF نا ہٹائی گئیں تو 48 گھنٹے بعد اسے بند کردیا جائے گا۔