اس چیز والی غذا کوکھاناشروع کردیں ،شوگر کے مرض سے بچ سکتے ،جدید تحقیق میں انکشاف

نیویارک(ویب ڈیسک)ذیابیطس کا مرض پیدا ہونے کی ایک اہم وجہ خون میں شوگر لیول کا بڑھ جانا ہے۔ شوگر لیول کا اس طرح بڑھ جانا دراصل غذا میں کرومیم کی مخصوص مقدار میں کمی واقع ہونا ہے۔ امریکن ڈایابیٹکس ایسوسی ایٹڈ کی تحقیقات کے مطابق کرومیم شوگر میٹابولزم کی کارکردگی بہتر کرتا ہے۔ ایک مطالعہ کے دوران جب ذیابیطس ٹائپ ٹو کے مریضوں کے علاوہ عام افراد کو کرومیم سپلیمنٹ دیا گیاتو اسکے مثبت اثرات دیکھنے کو ملے ۔میڈیکل سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ کرومیم کی مقدار کا انحصار مرض کی نوعیت پر ہے ۔ایسے افراد جو اس معدنی عنصروالی غذائیں

استعمال کرتے ہیں ان کے خون میں شوگر لیول بڑھتا نہیں۔محافظ بدن معدنی عنصر ہے۔ یہ شوگر کے مرض سے بچاتا اور کولیسٹرول اور ٹریگلرائیڈ کو قابو میں رکھتا ہے۔ماہرین کا کہنا ہے کہ کرومیم ایک ایسا معدنی عنصر ہے جو جذب نہیں ہوتا اور پیشاب کے ذریعے خارج ہو جاتا ہے مگر بدن میں اس کی موجودگی بہرحال بہت ناگزیر ہوتی ہے۔ صحت مند زندگی کے لئے ایک عورت و مرد میں اس کی 50سے 200مائیکروگرام ‘ بچے میں 20سے 200مائیکروگرام اور شیرخوار بچے میں 10سے 60مائیکروگرام مقدار کی ضرورت ہوتی ہے۔ کرومیم کی کمی کے باعث شریانیں سخت ہو جاتی ہیں۔ لہذا صحت مند زندگی گزارنے کے لئے متوازن غذا کا استعمال بہت ضروری ہے۔کرومیم روزمرّہ کی غذاؤں میں دستیاب ہوتا ہے۔ یہ چھالیا‘ کاجو‘ بادام‘ اخروٹ‘ مونگ پھلی‘ رائی کے بیج‘ انار‘ ٹماٹر پکے ہوئے‘ انناس‘ جیک فروٹ‘ شریفہ‘ پان کے پتے‘ گاجر‘ اروی کے پتے‘ چقندر‘ پیاز کے ڈنٹھل‘ آم کے پتے‘ کدو‘ سفید چنے‘ خشک مٹر‘ کالے چنے‘ مسور سالم‘ لوبیا‘ دیسی باجرہ‘ گندم جیسی غذاؤں میں مناسب حد تک ملتا ہے۔
ماہرین کے مطابق کرومیم کا زیادہ استعمال پھیپھڑوں کے کینسر اور ایگزیما کی بیماری پیدا کرتا ہے۔اور اسے بطور سپلیمنٹ اپنے معالج سے مشورہ کئے بغیر ہر گز استعمال نہیں کرنا چاہئے۔