انسانیت کی خدمت کے لئے سمارٹ بینڈج بنانے والے پاکستانی سائنسدانوں کو15کروڑ روپے حاصل کرنے کے لئے قوم کے ووٹ کی ضرورت

ٹیکساس(ڈیلی خبر) زخموں کو جدید ٹیکنالوجی کے ذریعے مندمل کرنے والی سمارٹ بینڈج ایجاد کرنے والی پاکستانی سائنسدانوں کی ٹیم 15کروڑ روپے کی انعامی رقم جیتنے کے قریب پہنچ گئی ہے۔ اس موقع پر پاکستانی قوم کی جانب سے آن لائن ووٹ انہیں مقابلہ جیتنے میں مدد دے گا۔تفصیلات کے مطابق 5پاکستانی سیاستدانوں کی ٹیم نے زخموں کو مندمل کرنے کے لئے سمارٹ بینڈج ایجاد کرلی ہے۔ یہ بینڈج زخم پر لگانے کے بعد انسانی دماغ کے ساتھ منسلک ہو کر زخم کو جلدی مندمل کرنے کے لئے خلیے تیار کرتی ہے۔ اس بینڈج کے ذریعے ڈاکٹرز بھی براہ راست اپنے مریض سے رابطے میں رہ سکتے ہیں۔ یہ پٹی زخم پر لگاتے ہی زخم کے بارے میں لمحہ بہ لمحہ اپ ڈیٹ ڈاکٹر کے موبائل فون پر پیغام کے ذریعے بھیجنا شروع کر دیتی ہے۔ڈاکٹر اپنے موبائل فون کے ذریعے ہی مریض کے زخم کی بہتری کے لئے تجاویز سمارٹ بینڈج کو دے گا۔اس عظیم ایجاد کے بعد بین الاقوامی سطح پر پاکستانیوں کے اس عظیم کارنامے کو سراہا جا رہا ہے۔ اس حوالے سے بین الاقوامی سطح پر مقابلے کے لئے انہیں منتخب کر لیا گیا ہے۔ یہ مقابلہ دنیا بھر کے طالب علموں کا سب سے بڑا اور مہنگا مقابلہ ہے ۔ یہ مقابلہ چاول کے کاروبار اور ٹیکنالوجی کے ادارے ( Rice Alliance for Technology and Entrepreneurship )نامی گروپ کی جانب سے منعقد کرایا جا رہا ہے۔ سمارٹ بینڈج بنانے والی ٹیم میں پاکستانی پروفیسر عاطف شمیم شامل ہیں جو ک بین الاقوامی مطبوعات کے مصنف اور وائرلیس مائیکرو اینٹینا کے میدان میں ایک ماہرہیں جنہوں نے کارلٹن یونیورسٹی سے الیکٹرانکس میں پی ایچ ڈی کی ڈگری حاصل کی ہوئی ہے،۔ٹیم کے دوسرے ممبر وقاص ہیں جو کہ واٹرلو یونیورسٹی کے طالب علم ہیں جنہوں نے یورپ، متحدہ عرب امارات اور پاکستان میں مختلف ٹیلی کام کے شعبے میں خدمات سرانجام دی ہیں۔