نمک کھانے کا یہ طریقہ سنت نبوی ﷺ کے مطابق اپنایاجائے تو ستر بیماریوں سے بچاتا ہے

لاہور (ڈیلی خبر)نمک کو عربی میں ملح ،انگریزی میں سالٹ کہا جاتا ہے ۔زمانہ قدیم سے نمک غذاو¿ں میں استعمال ہوتا آرہا ہے۔یہ بدن کے اعضا کی کارکردگی کے لئے بنیادی کردار ادا کرتا ہے۔جسم سے نمک کم یا زیادہ ہوجائے تو امراض جن لیتے ہیں ۔ نمک کھانا سنت اور بیماریوں سے شفا کا ذریعہ بنتا ہے مگر آج ہر کوئی نمک کی برائیاں بیان کرتا نظر آتا ہے۔حالانکہ اس میں نمک کا کوئی قصور نہیں بلکہ طرز زندگی خراب ہونے سے نمک کے مفید ہونے کا فائدہ نہیں اٹھایا جارہا۔
رسول کریم ﷺ نمک کے ساتھ روٹی تناول فرماتے تھے۔اسلام میں کھانے کا مسنون طریقہ یہ ہے کہ کھانے سے پہلے اور کھانے کے بعد نمک چکھ لیا جائے۔ حضرت علی المرتضیٰ ؓ راویت فرماتے ہیں کہ حضور نبی کریمﷺ نے فرمایا”کھانا نمک سے شروع اور نمک پر ختم کیا کرو ، کیونکہ اس میں ستر بیماریوں سے شفاءہے ،جن میں جذام ،برص ،درد حلق، درد دندان اور دردِ شکم شامل ہے۔“
ابن ماجہؓ نے اپنی سنن میں حضرت انسؓ کے حوالے سے حدیث کاذکر کیا ہے۔جس میں نبی کریم ﷺ نے فرمایا”اعلیٰ ترین سالن نمک ہے“ بلاشبہ ہر چیز کے ذائقہ کا دارومدار نمک پر قائم ہے۔ ایک اور روایت کے مطابق نبی اکرم ﷺ نے فرمایا”عنقریب وہ دور آنے والا ہے جس میں تم لوگ کھانے میں نمک کی طرح ہوگے اور کھانے کی اصلاح نمک کے ذریعہ ہی ہوتی ہے“۔ حضرت عبداللہ بن عمرؓ سے روایت ہے۔”اللہ تعالیٰ نے آسمان سے زمین کی طرف چار برکتیں نازل فرمائی ہیں‘لوہا‘آگ ،پانی اور نمک“۔ایک روایت کے مطابق رسول اللہﷺ نے بچھو کے کاٹے کا علاج نمک سے کیا۔
خوردنی نمک کے طبی خواص معروف ہیں۔یہ رطوبات غلیظہ کو ختم کرکے خشک کرتا ‘بدن کو تقویت بخشتا فاسد اور متعفن ہونے سے روکتا اور خارش کے زخموں کے لئے نافع قرار دیا جاتا ہے۔