’’ہاں میں گدھا ہوں اسی لئے یہ کام کرتا ہوں ‘‘بھارتی وزیر اعظم گدھے کے ’’پرستار ‘‘ نکلے ، انوکھی ’’منطق ‘‘ پیش کر دی

لکھنؤ()انڈین ریاست اتر پردیش میں بھارتی گجرات کے ’’گدھے ‘‘پر ہونے والی سیاست ہے کہ تھمنے کا نام ہی نہیں لے رہی ، نریندرا مودی ’’گدھے ‘‘ کے بھی پرستار نکلے ہیں اور اس کی’’محنت ‘‘ سے متاثر ہو نے کا اعلان کرتے ہوئے کہا ہے کہ گدھے کے اخراجات کم اور کام زیادہ ہوتا ہے ، میں اس’ ’وفادار‘‘ اور’ ’محنتی‘‘ جانور سے ہمیشہ سبق حاصل کرتا ہوں۔بھارتی نجی ٹی وی چینل ’’اے بی پی نیوز ‘‘ کے مطابق یوپی کے ضلع بہریچ میں انتخابی ریلی سے خطاب کرتے ہوئے ہندوستانی وزیر اعظم نریندرا مودی نے اتر پردیش کے وزیر اعلیٰ اکھلیش یادو کی جانب سے کئے جانے والے طنزیہ جملے کا جواب دیتے ہوئے کہا ہے کہ گدھا کم اخراجات میں زیادہ کام کرتا ہے ،مالک گدھے سے جو بھی کام لینا چاہے ،گدھا چاہے بھوکا ،ہو یا تھکا ہوا ، اس کے اوپر مالک چینی لاد دے یا چونا ،خاموشی کے ساتھ ہر حالت اور مشکل میں مالک کے کہے ہوئے کام کو پورا کرتا ہے ،میں بھی ہندوستان کے عوام کو اپنا مالک سمجھتا ہوں ،گدھے سے اس لئے متاثر ہو ں کہ وہ اپنے مالک کا وفادار ہوتا ہے ،میں بھی عوام کو اپنا مالک سمجھتا ہوں اور دن رات عوام کی خدمت کرنے کی کوشش کرتا ہوں ۔واضح رہے کہ چند روز قبل اتر پردیش کے وزیر اعلیٰ اکھلیش یادو نے بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا اور انہیں گدھا قرار دیتے ہوئے ان کا نام لئے بغیر کہا تھا کہ ’’ وہ گجرات کے گدھوں سے خوفزدہ ہیں‘‘۔اکھلیش یادو کی اِسی تنقید کا جواب دیتے ہوئے نریندرا مودی کا کہنا تھا کہ اتر پردیش میں اب چاروں طرف بھارتیہ جنتا پارٹی کی آندھی دکھائی دے رہی ہے ،اکھلیش یادو اپنے 5سالہ دور میں کئے جانے والوں کاموں کا جواب دینے کی بجائے سوچے سمجھے اور شرمندہ ہوئے بغیر اول فول بول رہے ہیں۔بھارتی وزیر اعظم نے ایس پی کانگریس اتحاد کو بھی آڑے ہاتھوں لیتے ہوئے کہا کہ اتر پردیش کے عوام کسی بھی مفاد پرست اتحاد کو قبول نہیں کریں گے ،آج مہاراشٹر کے بھی انتخابی نتائج آنا شروع ہو گئے ہیں ،اس میں بھی کانگریس کہیں نظر نہیں آ رہی ۔انہوں نے کہا کہ اترپردیش کو 27سال سے بے حال کرنے والے اور 27سال یو پی کو بے حال کہنے والے دونوں مل گئے ہیں