قصور،معصوم بچی زینب کے ساتھ زیادتی اور قتل،تحقیقاتی اداروں نے علاقے کے تمام مردوں کے بارے میں بڑا فیصلہ کرلیا، کارروائی شروع

قصور /لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک) سات سالہ بچی سے زیادتی کے بعد قتل کے واقعہ کی تحقیقات کا دائرہ مزید وسیع کر دیا گیا ،زینب سمیت آٹھ بچیوں کے کیس میں ایک ہی ڈی این اے میچ ہونے پر دوتھانوں کی حدود میں رہائش پذیرعلاقے کے تمام مردوں کے ڈی این اے کے نمونے حاصل کرنے شروع کردئیے گئے، گھروں سے دوسرے علاقوں میں جانے والے افرادکے بارے میں بھی پوچھ گچھ شروع کر دی گئی ۔ ذرائع کے حوالے سے بتایاگیا ہے کہ حکومت پر زینب قتل کیس کو حل کرنےکیلئے دباؤ بڑھ گیا ہے جس کی وجہ سے حکومت کےلئے پریشانی بڑھ رہی ہے ۔قصور میں زینب سمیت آٹھ بچیوں سے زیادتی اور قتل کے ملزمان کی گرفتاری کیلئے شہر کے دوتھانوں کی حدود میں واقعہ تمام گھرانوں کے مردوں کا ڈی این اے ٹیسٹ کرانے کا فیصلہ کر کے عملی اقدام شروع کر دیا گیا ہے۔ اس سلسلے میں دوتھانوں کی حدود کو آٹھ بلاکس میں تقسیم کردیا گیا ہے۔ ڈی جی فرانزک ڈاکٹر محمد اشرف طاہر کے ہمراہ چار فرانزک ماہرین اور چھ انٹیلی جنس افسران موجود ہیں۔